اسرائیل، فلسطینیوں پر گرفت کم کرنے کیلئے رضامند

37570200_303

اسرائیلی عہدیدار کے مطابق امریکی صدر کی درخواست پر اسرائیل نے فلسطینیوں پر اپنی گرفت کو کم کرنے کیلئے رضامندی کا اظہار کردیا ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی آمد سے کچھ گھنٹے قبل اسرائیلی وزیر نے فلسطین کے معاشی اور سرحد پار کرنے کی سہولیات کو بہتر بنانے کے اقدامات منظور کردیے۔

ان اقدامات کے حوالے سے دعویٰ کیا جارہا ہے یہ امریکی صدر کی درخواست پر منظور کیے گئے۔

واضح رہے کہ سعودی عرب کے دورے کے بعد امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اسرائیل پہنچے تو ائیرپورٹ پر اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو سمیت دیگر اسرائیلی حکام ان کے استقبال کیلئے موجود تھے۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق ایک اسرائیلی عہدیدار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ فلسطینی صدر محمود عباس سے مذاکرات سے قبل ’اعتماد سازی اقدامات‘ کے طور پر اسرائیلی وزیر نے ڈونلڈ ٹرمپ کی درخواست کا جواب دیا ہے۔

اسرائیل کے اس اقدام پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ انتظامیہ کے جاری بیان میں کہا گیا کہ انھوں نے ’امن کے قیام کیلئے دونوں جانب سے اٹھائے جانے والے اقدامات کو سراہا ہے‘۔

امریکی صدر کے حوالے سے انتظامیہ کا کہنا تھا کہ ’انھوں نے مغربی کنارے کے علاقوں اور غزہ میں فلسطینی معیشیت کو بہتر بنانے کیلئے اقدامات اٹھانے پر خاص طورپر دلچسپی لی ہے‘۔

اسرائیلی عہدیدار نے ڈونلڈ ٹرمپ کے دورے کی جانب اشارہ کرتے ہوئے بتایا کہ، جو اسرائیلی مفادات کو نقصان نہیں پہنچاتا، وزیراعظم نیتن یاہو کی سیکیورٹی کابینہ نے مغربی کنارے کے جنوبی حصے میں فلسطینی صنعتی زون میں توسیع کی منظوری بھی دے دی۔

اسرائیلی عہدیدار کا کہنا تھا کہ ممکنہ طور پر اسرائیلی ریلوے کے نظام کو مغربی کنارے کے علاقے جینین تک لے جانے کے سلسلے میں بھی جانچ پڑتال کی اجازت دے دی گئی۔

ان کا کہنا تھا کہ فلسطینی مزدوروں کے اسرائیل میں داخلے کی اجازت دینے کے معاملات بھی زیر غور آئے ہیں جبکہ یہ فیصلہ بھی کیا گیا ہے کہ دریائے اردن پر فلسطین اور ہمسایہ ریاست کو ملانے والے پل پر قائم سرحد پار کرنے کی سہولت کو 24 گھنٹے کھولا جائے گا۔

اس کے علاوہ یہ اصلاحات بھی زیر غور آئی ہیں کہ شہری علاقوں میں فلسطینی زمین پر تعمیرات کی اجازت دی جائے گی جو 60 فیصد اسرائیل کے مکمل کنٹرول میں ہے۔

انھوں نے اس حوالے سے مزید تفصیلات فراہم نہیں کیں تاہم اسرائیلی اخبار ’ہارٹیز‘ کا کہنا تھا کہ اس اقدام کا مقصد علاقے میں ’فلسطینیوں کیلئے ہزاروں مکانات‘ تعمیر کرنے کی اجازت دینا ہے، یہاں کئی سالوں سے فلسطینیوں کو مکانات کی تعمیر کرنے کیلئے اسرائیلی پرمٹ جاری نہیں کیا جارہا تھا۔

اسرائیلی اخبار نے کہا کہ گذشتہ روز ہونے والے اجلاس میں اسرائیل کے وزیر تعلیم اور وزیر قانون نے اس منصوبے کی سخت مخالفت کی ہے۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s