بنکاک میں ہسپتال کے باہر دھماکا، 24 افراد زخمی

بنکاک: مشرقی ایشیائی ریاست تھائی لینڈ کے دار الحکومت بنکاک کے ایک ہسپتال کے باہر ہونے والے دھماکے کے نتیجے میں 24 افراد زخمی ہوگئے جبکہ ہسپتال کی عمارت کو بھی نقصان پہنچا۔

برطانوی خبر رساں ادارے رائٹرز کے مطابق دھماکا فرامونگ کتکلاؤ نامی ایک ہسپتال کے مرکزی دروازے کے قریب ہوا، جو فوجیوں اور ان کے اہلخانہ کے علاج و معالجے کے حوالے سے مشہور ہے۔

اس دھماکے کی ذمہ داری اب تک کسی گروپ نے قبول نہیں کی، تاہم تھائی فوجیوں نے ہسپتال کے داخلی راستوں کو سیل کردیا۔

تھائی لینڈ پولیس کی بم ڈسپوزل ٹیم کے کمانڈر کمتھورن اوکھاروین نے غیر ملکی خبر رساں ادارے کو بتایا کہ ’ہم نے ایسے ٹکڑے تلاش کیے ہیں جو بم بنانے کے لیے استعمال ہوتے ہیں تاہم اب تک یہ واضح نہیں ہے کہ اس دھماکے کے پیچھے کون ملوث ہے’۔

انہوں نے یہ بھی بتایا کہ حکام سی سی ٹی وی کیمروں کی مدد سے جانچ پڑتال کر رہے ہیں۔

تھائی حکومتی ترجمان کائیوکمنرڈ نے اس دھماکے کے نتیجے میں 24 افراد کے زخمی ہونے کی تصدیق کی۔

تھائی فوج کے قومی سلامتی یونٹ کے مطابق زیادہ تر افراد شیشوں کے ٹکڑے لگنے کے باعث زخمی ہوئے۔

تجزیہ نگاروں کے مطابق اس دھماکے کے پیچھے فوجی بغاوت کی مخالف سیاسی جماعتیں یا پھر تھائی لینڈ کے جنوبی علاقوں میں بسنے والے علیحدگی پسند مسلمان گروپ ہو سکتے ہیں۔

ڈپٹی نیشنل پولیس چیف جنرل سری وارا رنگسی برہمناکل کا کہنا تھا کہ بم ایک ڈبے میں چھپا کر ہسپتال کے داخلی راستے پر رکھا گیا تھا۔

یاد رہے کہ یہ واقعہ 2014 میں تھائی لینڈ میں ہونے والی فوجی بغاوت کی تیسری سالانہ تقریب کے روز پیش آیا جس کے نتیجے میں منتخب حکومت کا تختہ الٹ کر ملک کا نظام فوج نے اپنے ذمہ لے لیا تھا جس کے ساتھ ہی ملک میں جاری غیر یقینی کی صورتحال اور خونی مظاہروں کا اختتام ہوگیا تھا۔

اس دوران تھائی لینڈ کی اُس وقت کی وزیراعظم ینگ لک شنواترا کو ان کے اہلخانہ اور متعدد افراد سمیت حراست میں لے لیا گیا تھا۔

بعد ازاں ’جنتا‘ کے نام سے مشہور نیشنل کونسل فار پیس اینڈ آرڈر (پی سی پی ای) نامی قانون ملک میں نافذ کیا گیا اور شاہی ہتک عزت قوانین کے تحت ملک میں لوگوں کے خلاف کارروائیاں کی گئیں۔

یاد رہے کہ ایک ہفتہ قبل تھائی صوبے پٹانی میں ایک شاپنگ سینٹر کے قریب بم دھماکا کیا گیا تھا جس میں تقریباً 40 افراد زخمی ہوگئے تھے جس کا الزام تھائی حکام نے مسلمان علیحدگی پسند گروپ پر لگایا تھا۔

اس کے علاوہ 15 مئی کو بھی بنکاک میں نیشنل ٹھیٹر کے قریب ایک دھماکا ہوا تھا جس کے نتیجے میں 2 افراد زخمی ہوگئے تھے۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s